RSS
 

محفوظات برائے ’اپنا بلوچستان‘ زمرہ

بلوچی تھیریم – دنیا کا عظیم ترین ممالیہ

27 Feb 2014

جہاں آجکل پنجاب کی تحصیل تونسہ کا شہر ھے وہاں سے اگر مغرب کی جانب سفر کیا جائے تو پندرہ بیس کلو میٹر پر ایک پہاڑی مقام ھے جسے “چتر وٹہ ” کہتے ہیں ۔ اس پہاڑی سلسلے کا نام بھی چتر وٹہ رینج ھے جو بڑھتا ہوا بلوچستان میں بمبور کے پہاڑی سلسلے سے Read more…| مزید ۔۔۔

 

ذرا تافتان تک 4 ۔ ملکہ کی کہانی

26 Feb 2014

ہم دالبندین سے کوئی تیس پینتیس کلومیٹر آگے  پہنچ چکے تھے اور اس جگہ پر پر رکنے کی ایک خاص وجہ تھی ۔ یوں تو شاہراہ پر دوڑتی  آجکل کی  گاڑیوں کے لیئے یہ کوئی بہت خاص سٹاپ اورو نہیں ھے۔ بس لیویز کی ایک چیک پوسٹ کی  عمارت  کی سفید رنگت ، سورج کی Read more…| مزید ۔۔۔

 

ذرا تافتان تک ۔ 3

28 Dec 2013

پارک سے نکل کر شرفی نے کہا ، خبردار اگر اس کے بعد تم نے مجھے نایاب جنگلی حیات کے نام پر کوئی اور بھیڑ یا بکری دکھانے کی کوشش کی ۔ تو اس کا مطلب ہے اگلا سٹاپ مارخور کی محفوظ پناہ گاہ ہزار گنجی چلتن نیشنل پارک فہرست میں سے نکال دوں ؟ Read more…| مزید ۔۔۔

 

ذرا تافتان تک۔2

24 Dec 2013

وہاں سے نکلے تو پھر شاہراہ پہ چل نکلے ۔  آگے بائیں جانب فاطمہ جناح جنرل اینڈ چیسٹ ہوسپٹل پڑتا ہے جو ابتدا میں ٹی بی سینیٹوریم کے طور پر قائم کیا گیا تھا لیکن بعد میں اس کا درجہ بڑھا کر  تقریبا ڈھائی سو بیڈز کا جنرل اینڈ چیسٹ ہسپتال کر دیا گیا ہے Read more…| مزید ۔۔۔

 

ذرا تافتان تک

23 Dec 2013

کام میں ذرا وقفہ آیا اور تین دن کی اکٹھی چھٹیاں میری ہو گئ تھیں ۔ اب یہ میرے اختیار میں تھا کہ ان چھٹیوں کو حسب عادت سو کر گذار دیا جائے یا پھر کسی اور مصرف میں لے آئیں ۔ دل میں ایک خیال ابھرا کہ کیوں نہ تفتان پاک ایران بارڈر کا Read more…| مزید ۔۔۔

 

دُکی دوار میں ۔ آخری قسط

18 Dec 2013

سامنے دور تک کوئلے کی کانیں پھیلی ہوئی تھیں  ۔ میرے دل میں خوشی کا ایک احساس بھی پیدا ہوا کہ باآخر یہ مقامی لوگ اس زیرزمین دولت سے فائدہ اٹھانے کے قابل ہو گئے ہیں جو قبائلی تنازعات کی وجہ سے عرصہ دراز سے ان کی پہچ سے دور تھی ۔میرا خیال تھا کہ Read more…| مزید ۔۔۔

 

دُکی دوار میں-2

12 Dec 2013

چیک پوسٹ جس مقام پر ہے اس کا نام منڈے ٹک ہے اور یہ ایسی جگہ واقع ہے کہ نووارد گاڑی کو کچھ چڑھائی چڑھ کر اس پر پہنچنا پڑتا ہے حتی کہ پوسٹ کے سامنے پہنچ کر ایک ہموار سطح پر پہنچ کر جب آپ پیچھے نظر دوڑاتے ہیں تو  ایک لمبی سڑک بل Read more…| مزید ۔۔۔

 

دُکی دوار میں

08 Dec 2013

پچھلی پوسٹ میں پٹھان کوٹ کے بابا کے چشمے کے رواں پانی کی قلقاریوں سے فیض یاب ہونے کا ہلکا ہلکا نشہ ابھی طاری تھا کہ  ہمارے میزبان نے اسے ایک پُرتکلف ڈنر سے  دوآتشہ کر دیا اور جب ہمارے ساتھ کوئی ایسی واردات گذرتی ہے تو اس کے بعد ہماری واحد عیاشی ڈٹ کے سونا Read more…| مزید ۔۔۔

 

پٹھان کوٹ کا بابا اور دیو

08 Dec 2013

آئیں کچھ دیر کے لیئے چھوڑیں ٹی وی پر دل دہلاتی بریکنگ نیوز اور شہر کے کان لیوا ٹریفک کی موسیقی کے شور سے دور پٹھان کوٹ کے بابا سے ملنے چلتے ہیں ۔ کوئٹہ سے گاڑی کے ذریعے شمال کی جانب این 25 پہ چلیں تو پہلے کچلاک کا قصبہ آتا ہے ۔ اس Read more…| مزید ۔۔۔

 

بلوچستان کے مرہٹے

26 Oct 2013

کہتے ہیں کہ بارہ برس کے بعد گھورے کے دن بھی بدل جاتے ہیں لیکن یہ بات گھورے پہ تو شاید صادق آتی ہو کہ اس کا بھی استعمال زمین کی زرخیزی میں ہوتا ہے لیکن یہ بات بلوچستان کے مرہٹوں پر صادق نہیں آتی اور وہ اس جدید دور میں بھی تقریبا غلامی کی Read more…| مزید ۔۔۔